Ludmila Vassilyeva, Russian scholar expert on Urdu poetry & literature

 

Following news item was sent The Muslim Times by Haider Qureshi, a renowned author, poet, and literary critic. Many students have written their masters, doctoral thesis on his work.

unnamed

“The formation of Urdu ghazal: the origins of the genre” is the first attempt by a Russian scholar to analyze the initial phase in the history of Urdu ghazal.

Against a vast historical, ethno-cultural and linguistic background of medieval India, the book discusses major stages in the formation and early development of Urdu ghazal through the period of more than four centuries: first experiences in the North (fourteenth century), formation of the genre and its poetics in the South (fifteenth to early seventeenth century) and further development of ghazal in the North up to the beginning of classical period (seventeenth to mid-eighteenth century). Deep and multi-dimensional research into the emergence and evolution of ghazal discloses fundamental laws of literary process in the variety of its inter-textual and supra-textual connections. The analysis of the early phases of Urdu ghazal testifies to the unbreakable link of this genre with both Iranian literary models and primordial Indian cultural-literary tradition.

The book collects, systematizes and interprets a vast bulk of ghazals, offering translations along with the original texts. Poetological analysis of the ghazals, accompanied by the explanation of complicated values, symbols and meanings, sometimes illegible for the bearers of other cultural traditions and at the same time vital for modern Urdu milieu as well, establishes the aesthetic validity of early Urdu poetry as known to the history of literature. Emphasis is made on the “biography” of Urdu language: it discusses the emergence and development of this language in various regions of pre-colonial India with special reference to the names given to this language on every stage of its “travels” throughout the subcontinent.

The “Afterword” to the book deals with the Indian Mu’shaira, a phenomenon of Indo-Iranian synthesis, closely connected with the history and development of Urdu ghazal.

 

 

CONTENTS, 

Introduction

Ghazal in India` s literary and cultural context. Main features of Urdu ghazal as a genre and the “ghazal world”. On the studies in Urdu ghazal.

Chapter I. Urdu language and the Flow of Times

What is Urdu language? Geographical spreading and evolution of forms. Southward march. The origin of “Urdu” term. Historical memory as preserved in the poems. A few words on Urdu graphics. Europeans and Urdu; Fort William College and Urdu, John Gilchrist and Urdu. Hindi, Hindustani and Urdu. Urdu today: India, Pakistan and the world.

Chapter II. The Initial Phase of Urdu Ghazal.

North India in the eleventh – fourteenth century as a cultural region. Whence the origin of Urdu ghazal? Hypotheses. Amir Khusraw Dehlevi. On Amir Khusraw`s poetics. The Rehta ghazal. Early ghazal that survived through the centuries. The “prehistory” of Urdu ghazal.

Chapter III. The “childhood” of Urdu ghazal

Way to the South. First ghazals and first Dakhini poets. Firoz Bidari, Hasan Shauqi, Mahmud Dakani. Muhammad Quli Qutb Shah. First translation of ghazal into Dakhini: “The Lost Yu`suf”. The courtly ghazal in the Deccan.

Chapter IV. The Transitory Period.

Aurangabad as Deccan` s cultural capital at the end of the seventeenth century. A poet by name Wali. Wali as founder of the present Urdu ghazal. “Deccan features” and “Persian images”. Syncretism of the imagery in Wali` s ghazals. The Sufic ghazal: Siraj Aurangabadi.

Chapter V. The “youth” of Urdu ghazal.

End of Aurangzeb` s Reign and literary circles of Delhi. Mirza Bedil and others. Post-Wali Delhi: the “Muhammad Shah epoch”. The Rehta poetry outburst. Literary discipleship institution. Khan-e Arzu and literary duel with Hasan. The Ihamgoi movement: Abru and others. Faiz Dehlevi. Arzu` s reformism and “high Urdu”. The “Safgoi”: Mirza Jan-i Jahan Mazhar. The advent of the classical period.

Afterword. The Indian Mu’shaira: Sufi abode – Shahi court – city square

What is Mu’shaira? A historical excurse: from the Arabian old to the Indian old. Early Mu’shairas in India. Classical Mu’shairas. “Shahi Mu’shaira”. Mu’shaira in the twentieth – twenty-first century. A modern glimpse. Ghazal and Mu’shaira nowadays.

 

Index of Authors. Index of literary terms.Index of geographical names.

===========Following review on Dr Ludmilla book is by Haider Qureshi=============

پرورشِ لوح و قلم
(فیض حیات اور تخلیقات) 

ڈاکٹر لدمیلا ماسکو میں اردو کی معروف خدمتگار ہیں اور پوری اردو دنیا میں ان کا نام جانا پہچانا ہے۔یوں تو اردو زبان کے حوالے سے ان کی خدمات بہت زیادہ ہیں لیکن ان کی ایک اہم شناخت ’’فیض شناسی‘‘ کی ہے۔ سابق سوویت یونین میں فیض احمد فیض کوجو عزت و توقیر حاصل تھی وہ اظہر من الشمس ہے۔فیض کی زندگی اور ان کی ادبی خدمات کے سلسلہ میں ان کی زیر نظر تصنیف بنیادی طور پرروسی زبان میں لکھی گئی اور اسی میں شائع ہوئی۔اس کے بعد اس کتاب کے چند ابواب کا اردو ترجمہ اُسامہ فاروقی نے کیا۔اسی دوران ان کی وفات ہو گئی تو بقیہ ابواب کا ترجمہ ڈاکٹر لدمیلا نے خود کیا(خدا انہیں سلامت رکھے) اور یوں یہ کتاب اہلِ اردو کے لئے بھی دستیاب ہو گئی۔
اس کتاب میں نہایت محنت اور عرق ریزی کے ساتھ فیض کی زندگی کے حالات جمع کیے گئے ہیں۔ان کی زندگی کے نشیب و فراز کو بڑی حد تک اس میں یکجا کر دیا گیا ہے۔فیض کی شخصیت میں جو نرمی،محبت،صلح جوئی،امن پسندی تھی اور اس نوعیت کی دیگر تمام خوبیوں کے ساتھ وہ ایک انقلابی شاعر بھی تھے۔ان کی انقلابی شاعری میں بھی ان کے شخصی اوصاف نے ایک دھیما پن پیدا کر دیا۔وہ دھیما پن جس نے فیض کو باقی سارے ترقی پسند شاعروں سے منفرد و ممتاز کر دیا۔ فیض کی شاعری کا جائزہ لینے میں ڈاکٹر لدمیلا نے نہایت علمی و ادبی بصیرت کا مظاہرہ کیا ہے۔جو ہندو پاک میں فیض کے ان مداحوں کے لیے ایک چیلنج ہے،جو فیض کے بارے میں بہت کچھ لکھنے کے باوجود ابھی تک ڈاکٹر لدمیلا جیسی بصیرت تک نہیں پہنچ سکے ۔ڈاکٹر لدمیلا کی تنقیدی بصیرت کا کمال ہے کہ انہوں نے فیض سے اپنی عقیدت کو مجروح بھی نہیں ہونے دیا اور ان کی ادبی خوبیو ں کے ساتھ ان کی ادبی کمزوریوں کو بھی مدِ نظر رکھا ہے۔فیض کی شاعری کا ارتقائی سفر جاننے کے لیے ڈاکٹر لدمیلا کے تجزیے سند کا درجہ اختیار کر گئے ہیں۔
فیض کی زندگی کے نشیب و فراز کے ساتھ ہمیں یوں تو متعدد شخصیات سے تعارف حاصل ہوتا ہے۔لیکن دو شخصیات کا تعارف بے حد اہم ہے۔ایک ایلس فیض جنہوں نے ایک برطانوی خاتون ہوتے ہوئے کسی بھی مشرقی خاتون سے بڑھ کرفیض سے وفا کی اور سکھ دکھ میں ہمیشہ ساتھ دیا۔دوسری شخصیت فیض احمد فیض کے والد صاحب کی ہے۔سلطان محمد خاں کی زندگی ایسے حیرت انگیز نشیب و فراز کی حامل ہے کہ قاری ہر قدم پر چونکتا ہے ۔جیسے یہ سچ مچ کی نہیں ،کسی طلسماتی کہانی میں بیان کی گئی زندگی ہو۔سچی بات یہ ہے کہ بے شک فیض کی اپنی زندگی جدو جہد، محنت، قربانی اور محبت سے بھری ہوئی ہے، لیکن ان کی طلسماتی شخصیت کی داستان بھی اپنے والد سلطان احمد خاں کی حیرتوں سے بھری زندگی کی داستان کے سامنے ماند پڑ جاتی ہے۔ 
اس کتاب میں یوں تو سارے واقعات گہری تحقیق کے بعد بیان کیے گئے ہیں۔ تاہم کلکتہ یونیورسٹی میں فیض کی ملازمت کے حوالے سے مجھے مزید تحقیق کی ضرورت محسوس ہو رہی ہے۔ڈاکٹر لدمیلا کے بیان کے مطابقجب فیض صاحب پاکستان سے نکل کر دلی گئے تو وہاں انہیں کئی یونیورسٹیز میں پروفیسر کی جگہ پیش کی گئی،وہ کلکتہ یونیورسٹی کو جائن کرنا چاہ رہے تھے کہ اسی دوران حکومت پاکستان نے حکومت ہند کو اشارا دیا کہ ایک پاکستانی شہری کے لیے اس طرح کا اقدام مناسب نہ ہو گا۔
ہندوستان میں مغربی بنگال ہمیشہ سے کیمونسٹ پارٹی کا گڑھ رہا ہے۔میری معلومات کے مطابق فیض کی جیوتی باسو سے ملاقات ہوئی تھی۔ان کے لیے کلکتہ یونیورسٹی میں ملازمت کی فراہمی کی غرض سے اقبال چیئر کی منظوری ہو رہی تھی۔منظوری کا باضابطہ طریق کار کسی حد تک طویل تھا۔سو انہیں پاکستانی حکومت کے کسی دباؤ کے باعث انکار نہیں کیا گیا تھا۔لیکن اقبال چیئر کی منظوری کے دفتری عمل کی طوالت کے دوران فیض کو لوٹس میں ادارت کی جاب مل گئی اور وہ دلی سے ماسکو ہوتے ہوئے لبنان چلے گئے۔میرا خیال ہے اس حوالے سے مزید تھوڑی سی تحقیق کی ضرورت ہے۔ممکن ہے ڈاکٹر لدمیلا کی بات ہی درست نکلے لیکن احتیاطاََ مزید تحقیق کی تھوڑی سی گنجائش موجود ہے۔باقی یہ حقیقت ہے کہ فیض پر یہ کتاب ایک دستاویزی حیثیت کی حامل کتاب ہے۔
کاش فیض کے پاکستانی اور انڈین مداح بھی فیض پر اسی پائے کی کوئی کتاب لکھ سکیں۔
( مطبوعہ جدید ادب جرمنی، شمارہ جنوری ۲۰۰۸ء)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Ludmila Vassilyeva (born May 23, 1942) is a Russian scholar who is an expert on Urdu poetry and literature. She teaches at the Institute of Oriental Studies of the Russian Academy of Sciences in Moscow.

Early life and education[edit]

Vassilyeva graduated from Moscow State University (1965) and received a Ph.D. in 1987. Her doctoral thesis was on Altaf Hussain Hali.[1]

Career[edit]

From 1967 to 1984, Vassilyeva was Faiz Ahmed Faiz‘s interpreter as he travelled throughout the Soviet Union. Her book Faiz Ahmed Faiz: Hayat aur Takhliqaat, published in 2006, was the first literary biography of Faiz.[2]

Vassilyeva has written extensively on Faiz and Muhammad Iqbal in both Urdu and Russian. She has translated many other Urdu poets including Ghalib and Majurh.[2] She teaches Urdu literature at Moscow University and Russian State University for the Humanities.

Awards and honors[edit]

For her outstanding contribution to Urdu studies she was conferred Sitara-i-Imtiaz award from President of Pakistan.

Works[edit]

  • Parvarish-e-Lauh-o-Qalam; Translated from Russian by Osama Farooqui and Ludmilla Vassilyeva. Karachi: Oxford University Pr

 

Categories: Russia, The Muslim Times

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.